سپریم کورٹ نے بازار میں تیزی کے دوران سیبی اور سیٹ کو ہوشیار رہنے کی مشورت دی ہے۔

سپریم کورٹ نے بین الاقوامی سیکیورٹیز اینڈ ایکسچینج کمیشن...

مرکزی حکومت کا الرٹ، وزارت صحت نے تمام ریاستوں کے لیے ایڈوائزری جاری کی

 مہاراشٹرا میں زیكا وائرس کے کچھ کیسز سامنے آنے...

بھارت-منگولیا مشترکہ فوجی مشق "نومیڈک ایلیفینٹ” میگھالیہ میں شروع

بھارت اور منگولیا کے مشترکہ فوجی مشق "نومیڈک ایلیفینٹ"...

ہاتھرس حادثے میں جاں بحق افراد کے لیے صدر اور وزیراعظم کی تعزیت

صدر دروپدی مرمو اور وزیراعظم نریندر مودی نے منگل...

راشٹریہ شکشک ایوارڈ کے لیے خود نامزدگی 15 جولائی تک: تعلیم وزارت

راشٹریہ شکشک ایوارڈ 2024 کے لیے اہل اساتذہ سے...

خصوصی اجلاس سے ایک دن قبل نئی پارلیمنٹ میں لہرائے گا ہندوستانی پرچم!

پارلیمنٹ کا خصوصی اجلاس 18 ستمبر سے شروع ہونے والا ہے اور اس سے ٹھیک ایک دن قبل یعنی 17 ستمبر کو نئے پارلیمنٹ ہاؤس میں ہندوستانی پرچم لہرایا جائے گا۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق نئے پارلیمنٹ ہاؤس کے داخلی دروازے پر پرچم کشائی ہوگی اور یہ عمل راجیہ سبھا چیئرمین اور لوک سبھا اسپیکر اوم برلا انجام دیں گے۔ اس دوران وزیر اعظم نریندر مودی کے موجود رہنے کے امکانات بھی ظاہر کیے جا رہے ہیں۔

بتایا جاتا ہے کہ پارلیمنٹ کے خصوصی اجلاس کے دوران 19 ستمبر کو پرانے پارلیمنٹ ہاؤس سے نئے پارلیمنٹ ہاؤس میں منتقلی کا پروگرام ہوگا۔ یعنی 18 ستمبر کو پارلیمانی اجلاس شروع ہونے کے دوسرے دن نئے پارلیمنٹ ہاؤس میں اجلاس ہوگا اور 22 ستمبر کو خصوصی اجلاس کا اختتام ہوگا۔ یہ بھی خبریں سامنے آ رہی ہیں کہ 18 ستمبر کو پرانے پارلیمنٹ ہاؤس میں جب اجلاس ہوگا تو پرانے پارلیمنٹ ہاؤس کی تعمیر سے لے کر اب تک کی یادوں کو تازہ کیا جائے گا۔

قابل ذکر ہے کہ پارلیمنٹ کا خصوصی اجلاس ہنگامہ خیز ہونے کے آثار ہیں، کیونکہ ابھی تک اس اجلاس سے متعلق کوئی ایجنڈا سامنے نہیں آیا ہے جس کو لے کر اپوزیشن پارٹیاں سخت ناراض ہیں۔ ذرائع کے مطابق اس اجلاس مین حکومت ’وَن نیشن، وَن الیکشن‘ بل لا سکتی ہے۔ ان خبروں کے بعد اپوزیشن نے جارحانہ رخ اختیار کر لیا ہے۔ حال ہی میں سونیا گاندھی نے حکومت کو ایک خط لکھا تھا جس میں کہا تھا کہ بغیر کسی صلاح و مشورہ کے خصوصی اجلاس کا اعلان کر دیا گیا ہے جو مناسب نہیں۔