سپریم کورٹ نے بازار میں تیزی کے دوران سیبی اور سیٹ کو ہوشیار رہنے کی مشورت دی ہے۔

سپریم کورٹ نے بین الاقوامی سیکیورٹیز اینڈ ایکسچینج کمیشن...

مرکزی حکومت کا الرٹ، وزارت صحت نے تمام ریاستوں کے لیے ایڈوائزری جاری کی

 مہاراشٹرا میں زیكا وائرس کے کچھ کیسز سامنے آنے...

بھارت-منگولیا مشترکہ فوجی مشق "نومیڈک ایلیفینٹ” میگھالیہ میں شروع

بھارت اور منگولیا کے مشترکہ فوجی مشق "نومیڈک ایلیفینٹ"...

ہاتھرس حادثے میں جاں بحق افراد کے لیے صدر اور وزیراعظم کی تعزیت

صدر دروپدی مرمو اور وزیراعظم نریندر مودی نے منگل...

راشٹریہ شکشک ایوارڈ کے لیے خود نامزدگی 15 جولائی تک: تعلیم وزارت

راشٹریہ شکشک ایوارڈ 2024 کے لیے اہل اساتذہ سے...

منی پور میں تشدد کا سلسلہ بدستور جاری، کوکی طبقہ کے 3 قبائلیوں کا گولی مار کر قتل

امپھال: منی پور میں تشدد کا سلسلہ جاری ہے۔ منگل کو یہاں کانگ پوپکی ضلع میں ملی ٹینٹوں نے تین قبائلی افراد کو گولی مار کر ہلاک کر دیا۔ افسران نے یہ معلومات فراہم کیں۔

منی پور کی راجدھانی امپھال میں حکام نے بتایا کہ مسلح عسکریت پسندوں نے امپھال ویسٹ اور کانگ پوپکی اضلاع کے سرحدی علاقوں میں ایرینگ اور کرم کے درمیان گاؤں پر حملہ کیا اور تین دیہاتیوں کو موقع پر ہی گولی مار کر ہلاک کر دیا۔ شدت پسند صبح سویرے ایک گاڑی میں قبائلی اکثریتی دیہات میں آ دھمکے اور سیکورٹی فورسز کے پہنچنے سے پہلے ہی وہاں سے فرار ہونے میں کامیاب رہے۔

اس سے قبل 8 اور 9 ستمبر کو بھی ٹینگنوپال ضلع کے پالیل میں سیکورٹی فورسز اور ملی ٹینٹوں کے درمیان فائرنگ اور تصادم میں تین افراد مارے گئے تھے۔

حکام نے بتایا کہ حملہ آور ایک گاڑی میں آئے اور امپھال ویسٹ اور کانگ پوکپی اضلاع کے سرحدی علاقوں میں واقع ایرینگ اور کرم علاقوں کے درمیان گاؤں والوں پر حملہ کیا۔ یہ گاؤں پہاڑوں میں واقع ہے اور قبائلیوں کی اکثریت ہے۔

خیال رہے کہ منی پور میں اس سال 3 مئی سے اکثریتی میتئی اور قبائلی کوکی برادریوں کے درمیان مسلسل جھڑپیں جاری ہیں اور اب تک 160 سے زائد افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

اپوزیشن اس معاملے پر مودی حکومت پر مسلسل حملہ کر رہی ہے۔ پارلیمنٹ میں بھی اس معاملے پر کافی ہنگامہ ہوا۔ اپوزیشن کی طرف سے اس معاملے پر مودی حکومت کے خلاف تحریک عدم اعتماد لائی گئی اور بالآخر وزیر اعظم مودی کو اس پر جواب دینا پڑا۔