سپریم کورٹ نے بازار میں تیزی کے دوران سیبی اور سیٹ کو ہوشیار رہنے کی مشورت دی ہے۔

سپریم کورٹ نے بین الاقوامی سیکیورٹیز اینڈ ایکسچینج کمیشن...

مرکزی حکومت کا الرٹ، وزارت صحت نے تمام ریاستوں کے لیے ایڈوائزری جاری کی

 مہاراشٹرا میں زیكا وائرس کے کچھ کیسز سامنے آنے...

بھارت-منگولیا مشترکہ فوجی مشق "نومیڈک ایلیفینٹ” میگھالیہ میں شروع

بھارت اور منگولیا کے مشترکہ فوجی مشق "نومیڈک ایلیفینٹ"...

ہاتھرس حادثے میں جاں بحق افراد کے لیے صدر اور وزیراعظم کی تعزیت

صدر دروپدی مرمو اور وزیراعظم نریندر مودی نے منگل...

راشٹریہ شکشک ایوارڈ کے لیے خود نامزدگی 15 جولائی تک: تعلیم وزارت

راشٹریہ شکشک ایوارڈ 2024 کے لیے اہل اساتذہ سے...

چندرابابو کی گرفتاری کے خلاف احتجاج، بپٹے اور پارٹی قانون سازوں کو پولیس نے حراست میں لیا

نئی دہلی: تلگودیشم پارٹی کے سربراہ اور آندھرا پردیش کے سابق وزیر اعلی چندرا بابو نائیڈو کے بیٹے نارا لوکیش کو اپنے والد کی گرفتاری کے خلاف احتجاج کرنے پر حراست میں لے لیا گیا۔ ٹی ڈی پی کے جنرل سکریٹری نارا لوکیش، جو ’یواگلم پدایاترا‘ کر رہے تھے، اپنے والد کی گرفتاری کے بعد احتجاجاً دھرنے پر بیٹھ گئے تھے۔ مشرقی گوداوری ضلع میں ان کے ساتھ احتجاج کرنے والے پارٹی کے کئی ارکان اسمبلی کو بھی حراست میں لیا گیا ہے۔

ٹی ڈی پی نے الزام لگایا ہے کہ پولیس نے نارا لوکیش کو اس کے والد سے ملنے سے روکا۔ نائیڈو کے وکیل نے کہا کہ وہ ضمانت کے لیے ہائی کورٹ سے رجوع کر رہے ہیں۔ اطلاعات کے مطابق نائیڈو کو ہائی بلڈ پریشر اور ذیابیطس کی تشخیص ہوئی ہے۔ ٹی ڈی پی نے حکمراں وائی ایس آر سی پی حکومت پر الزام لگایا کہ نائیڈو کو اس وقت غیر قانونی طور پر گرفتار کیا گیا جب وہ بس میں آرام کر رہے تھے۔

پارٹی کے ترجمان کماریڈی پٹابھیرام نے الزام لگایا کہ ریاستی پولیس اور سی آئی ڈی نے جمعہ کی رات سے ہی نائیڈو کو غیر قانونی طور پر گرفتار کرنے کا عمل شروع کر دیا تھا۔ سینکڑوں پولیس اہلکاروں نے کیمپ کی جگہ کو گھیر لیا جہاں نائیڈو آرام کر رہے تھے اور ان کے ساتھ تمام لیڈروں کو غیر قانونی طور پر حراست میں لے لیا۔ انہوں نے بتایا کہ نائیڈو نے پولیس سے پوچھا کہ انہیں کس بنیاد پر گرفتار کیا گیا لیکن پولیس انہیں کوئی جواب نہیں دے سکی۔

انہوں نے الزام لگایا کہ لوگ جانتے ہیں کہ گرفتاری کے پیچھے وزیر اعلی جگن موہن ریڈی کا ہاتھ ہے۔ انہوں نے انہیں ملک کا کرپٹ ترین وزیر اعلیٰ قرار دیا۔ ٹی ڈی پی نے سوشل میڈیا پر کئی پوسٹس میں اپنے سپریمو کی گرفتاری کی مذمت کی۔ ایک پوسٹ میں لکھا تھا کہ "کیا آپ سابق وزیر اعلی کو یہ بتائے بغیر گرفتار کر لیں گے کہ انہیں کیوں گرفتار کیا جا رہا ہے؟ ہم آپ کے ساتھ ہیں سر۔ عوام آپ کا قلعہ ہے، ہم لڑیں گے، جیتیں گے۔”

پارٹی نے یہ بھی الزام لگایا کہ حکام نے نائیڈو کو گرفتار کرتے وقت قائدین اور وکلاء کے سوالات کا جواب نہیں دیا۔ پولیس نے بس کا دروازہ کھٹکھٹایا اور جب نائیڈو سوال پوچھ رہے تھے تو انہوں نے انہیں گرفتار کر لیا۔ دریں اثنا، آندھرا پردیش سی آئی ڈی ہنرمندی کی ترقی کے گھوٹالہ میں نائیڈو کی گرفتاری پر منگل گری ہیڈکوارٹر میں ایک پریس کانفرنس کر رہی ہے۔