سپریم کورٹ نے بازار میں تیزی کے دوران سیبی اور سیٹ کو ہوشیار رہنے کی مشورت دی ہے۔

سپریم کورٹ نے بین الاقوامی سیکیورٹیز اینڈ ایکسچینج کمیشن...

مرکزی حکومت کا الرٹ، وزارت صحت نے تمام ریاستوں کے لیے ایڈوائزری جاری کی

 مہاراشٹرا میں زیكا وائرس کے کچھ کیسز سامنے آنے...

بھارت-منگولیا مشترکہ فوجی مشق "نومیڈک ایلیفینٹ” میگھالیہ میں شروع

بھارت اور منگولیا کے مشترکہ فوجی مشق "نومیڈک ایلیفینٹ"...

ہاتھرس حادثے میں جاں بحق افراد کے لیے صدر اور وزیراعظم کی تعزیت

صدر دروپدی مرمو اور وزیراعظم نریندر مودی نے منگل...

راشٹریہ شکشک ایوارڈ کے لیے خود نامزدگی 15 جولائی تک: تعلیم وزارت

راشٹریہ شکشک ایوارڈ 2024 کے لیے اہل اساتذہ سے...

گھوسی ضمنی انتخاب: سماجوادی پارٹی جیت کی طرف گامزن، اکھلیش یادو نے کہا- ’ناکام امیدوار کی ہار‘

لکھنؤ: اتر پردیش کے مؤ ضلع کی گھوسی اسمبلی سیٹ پر ہونے والے ضمنی انتخاب کے لیے ووٹوں کی گنتی جاری ہے۔ اس میں سماج وادی پارٹی (ایس پی) کے امیدوار سدھاکر سنگھ بڑی جیت کی طرف گامزن ہیں۔ آخری اطلاع موصول ہونے تک وہ بی جے پی امیدوار دارا سنگھ چوہان پر 33 ہزار سے زیادہ ووٹوں سے آگے تھے۔

اس پر ایس پی صدر اکھلیش یادو نے رد عمل ظاہر کرتے ہوئے گھوسی میں جیت کا اعلان کر دیا ہے۔ انہوں نے گھوسی کے عوام اور پارٹی امیدوار سدھاکر سنگھ کو بھی ان کی جیت پر مبارکباد پیش کی۔ انہوں نے کہا کہ گھوسی میں عوام کی بڑی سوچ جیت گئی ہے۔ گھوسی نے ایس پی کے ‘انڈیا اتحاد’ کے امیدوار کو جتایا ہے اور اب کل بھی یہی نتیجہ آئے گا۔

اکھلیش یادو نے کہا ’’یہ مثبت سیاست کی جیت اور فرقہ وارانہ منفی سیاست کی شکست ہے۔ یہ پارٹی کے تنگ نظری اور ذات پات کی غلامی سے اوپر اٹھ کر کام کرنے والے امیدوار کی جیت اور ناکام امیدوار کی شکست ہے۔ یہ سماج کو تقسیم کرنے والی بی جے پی کی تخریب کاری اور منفی سیاست کی عبرتناک شکست ہے۔ یہ جھوٹے پروپیگنڈے اور بیان بازی کی شکست ہے۔ یہ واٹس ایپ اور فیس بک جیسے سوشل میڈیا کے ذریعے پھیلائی جا رہیی ہے سماجی نفرت، گمراہ کن معلومات اور سیاسی جھوٹ کی شکست ہے۔‘‘

انہوں نے مزید کہا ’’یہ کرپشن، مہنگائی اور بے روزگاری جیسے مسائل کی بھی جیت ہے۔ یہ گرگٹ جیسے امیدواروں کے لیے بھی پیغام ہے کہ عوام نے ان کے اصلی رنگ پہچان لیے ہیں۔ یہ انحراف اور دل بدل کی سیاست کرنے والوں کی شکست ہے۔ یہ بی جے پی کے غرور اور تکبر کو چکناچور کرنے والا نتیجہ ہے۔

اکھلیش یادو نے کہا ’’یوپی ایک بار پھر ملک میں اقتدار کی تبدیلی کا لیڈر بنے گا۔ بھارت نے ‘انڈیا‘ کو جتانے کی شروعات کر دی ہے۔ یہ ملک کے مستقبل کی جیت ہے۔ یہ ایسا انوکھا الیکشن ہے جس میں ایک ایم ایل اے جیتا ہے لیکن ہارنے والے کئی پارٹیوں کے مستقبل کے وزیر ہیں۔ ‘انڈیا’ ٹیم ہے اور ’پی ڈی اے‘ حکمت عملی، ہمارا یہ نیا فارمولا کامیاب ثابت ہوا ہے۔‘‘