سپریم کورٹ نے بازار میں تیزی کے دوران سیبی اور سیٹ کو ہوشیار رہنے کی مشورت دی ہے۔

سپریم کورٹ نے بین الاقوامی سیکیورٹیز اینڈ ایکسچینج کمیشن...

مرکزی حکومت کا الرٹ، وزارت صحت نے تمام ریاستوں کے لیے ایڈوائزری جاری کی

 مہاراشٹرا میں زیكا وائرس کے کچھ کیسز سامنے آنے...

بھارت-منگولیا مشترکہ فوجی مشق "نومیڈک ایلیفینٹ” میگھالیہ میں شروع

بھارت اور منگولیا کے مشترکہ فوجی مشق "نومیڈک ایلیفینٹ"...

ہاتھرس حادثے میں جاں بحق افراد کے لیے صدر اور وزیراعظم کی تعزیت

صدر دروپدی مرمو اور وزیراعظم نریندر مودی نے منگل...

راشٹریہ شکشک ایوارڈ کے لیے خود نامزدگی 15 جولائی تک: تعلیم وزارت

راشٹریہ شکشک ایوارڈ 2024 کے لیے اہل اساتذہ سے...

مودی حکومت کا مردم شماری نہ کرانا ملک کی تاریخ میں ایک غیر معمولی ناکامی: کانگریس

نئی دہلی: کانگریس نے مردم شماری نہ کرانے پر مودی حکومت پر حملہ کرتے ہوئے آج کہا کہ وہ آزادی کے بعد سے ملک میں مقررہ وقت پر ہونے والی مردم شماری کو کرانے میں ناکام رہی ہے۔ ریاستی حکومتوں کی طرف سے ذات پات کی مردم شماری کے کام کی مخالفت نہیں کی جانی چاہئے۔

کانگریس کمیونیکیشن ڈپارٹمنٹ کے انچارج جے رام رمیش نے جمعہ کو یہاں جاری ایک بیان میں کہا کہ مودی حکومت 2021 میں ہونے والی دس سالہ مردم شماری کرانے میں ناکام رہی ہے جبکہ کئی دوسرے ترقی پذیر اور جی۔20 کے رکن ممالک جیسے انڈونیشیا، برازیل اور جنوبی افریقہ کووڈ 19 سے متاثر ہونے کے باوجود مردم شماری کرانے میں کامیاب ہو گئے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ بھارت اپنی باری میں 18ویں جی-20 کی صدارت کر رہا ہے لیکن مودی حکومت وقت پر مردم شماری نہیں کروا سکی اور یہ اس کی بڑی ناکامیوں میں سے ایک ہے۔ یہ حکومت اتنی نالائق اور نااہل ہے کہ 1951 کے بعد سے ہندوستان کے سب سے اہم شماریاتی عمل کو وقت پر مکمل کرنے میں ناکام رہی ہے۔ یہ آزاد ہندوستان کی تاریخ میں حکومت کی سب سے بڑی اور بے مثال ناکامی ہے۔

ترجمان نے کہاکہ ‘مودی حکومت نہ صرف مردم شماری کرانے میں ناکام رہی ہے بلکہ اس نے 2011 میں متحدہ ترقی پسند اتحاد (یو پی اے) حکومت کی طرف سے کی گئی سماجی و اقتصادی مردم شماری کو بھی دبا دیا ہے۔ اس نے سپریم کورٹ میں بہار حکومت کی ریاستی سطح پر ذات پات کی مردم شماری کی کوشش کی بھی مخالفت کی ہے اور ایسی کوشش کی مخالفت نہیں کرنی چاہیے۔

ایک میگزین میں تمام رپورٹس کا حوالہ دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اس ناکامی کی وجہ سے ایک اندازے کے مطابق 140 ملین ہندوستانی اپنے کھانے کے حق سے محروم ہو گئے ہیں۔ اس کے تحت 67 فیصد ہندوستانی کھانے کے لیے راشن حاصل کرنے کے حقدار ہیں۔ چونکہ مودی حکومت 2021 میں مردم شماری کرانے میں ناکام رہی، اس لیے وہ 2011 کی مردم شماری کی بنیاد پر صرف 81 کروڑ لوگوں کو غذائی تحفظ فراہم کر رہی ہے۔

کانگریس لیڈر نے ذات پات کی مردم شماری کو اہم قرار دیتے ہوئے کہا کہ آبادی کی گنتی، درجہ بندی اور او بی سی کی اکثریتی آبادی کی واضح وضاحت کے بغیر تمام ہندوستانیوں کے لیے ترقی اور سماجی انصاف کو یقینی بنانا ناممکن ہے۔ یہ بتاتے ہوئے کہ ہر ایک کو انصاف اور ان کے حقوق کو یقینی بنانے کے لیے ذات پات کی مردم شماری ضروری ہے، انہوں نے کہا کہ قومی ذات کی مردم شماری ہونی چاہیے اور ریاستی سطح پر ذات پات کی مردم شماری کی کوششوں کی مخالفت بند کرنا چاہیے۔