سپریم کورٹ نے بازار میں تیزی کے دوران سیبی اور سیٹ کو ہوشیار رہنے کی مشورت دی ہے۔

سپریم کورٹ نے بین الاقوامی سیکیورٹیز اینڈ ایکسچینج کمیشن...

مرکزی حکومت کا الرٹ، وزارت صحت نے تمام ریاستوں کے لیے ایڈوائزری جاری کی

 مہاراشٹرا میں زیكا وائرس کے کچھ کیسز سامنے آنے...

بھارت-منگولیا مشترکہ فوجی مشق "نومیڈک ایلیفینٹ” میگھالیہ میں شروع

بھارت اور منگولیا کے مشترکہ فوجی مشق "نومیڈک ایلیفینٹ"...

ہاتھرس حادثے میں جاں بحق افراد کے لیے صدر اور وزیراعظم کی تعزیت

صدر دروپدی مرمو اور وزیراعظم نریندر مودی نے منگل...

راشٹریہ شکشک ایوارڈ کے لیے خود نامزدگی 15 جولائی تک: تعلیم وزارت

راشٹریہ شکشک ایوارڈ 2024 کے لیے اہل اساتذہ سے...

جی-20 سربراہی اجلاس کا راہل گاندھی نے کیا خیرمقدم، کہا- ’خوشی کی بات ہے کہ ہندوستان اس کی میزبانی کر رہا ہے‘

برسلز: کانگریس کے سابق صدر راہل گاندھی نے بلجیم کے برسلز پریس کلب میں بین الاقوامی میڈیا سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ’’جی 20 بات چیت کے لحاظ سے بہت اہم ہے اور یہ خوشی کی بات ہے کہ ہندوستان اس کی میزبانی کر رہا ہے۔‘‘ دریں اثنا، انہوں نے جی-20 سربراہی اجلاس میں کانگریس صدر ملکارجن کھڑگے کو مدعو نہ کرنے پر مرکزی حکومت کو نشانہ بنایا۔ انہوں نے کہا کہ ’’اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ آپ ملک کے 60 فیصد عوام کے لیڈر پر توجہ نہیں دیتے۔‘‘

خبر رساں ایجنسی پی ٹی آئی کے مطابق راہل گاندھی نے کہا کہ ’’جمہوریت کے حوالے سے ہندوستان میں جو کچھ ہو رہا ہے وہ بہت سنگین ہے۔ ان لوگوں کے ذریعے ملک کے جمہوری ڈھانچے پر حملہ کیا جا رہا ہے جو ہندوستان کو چلا رہے ہیں۔‘‘ اقلیتوں پر حملے کے سوال پر راہل گاندھی نے کہا کہ صرف اقلیتوں پر ہی نہیں بلکہ دلتوں، قبائلیوں اور پسماندہ افراد پر بھی حملے ہو رہے ہیں۔ دراصل بی جے پی چاہتی ہے کہ دولت اور طاقت صرف اور صرف مرکز کے پاس رہے۔‘‘

جب ان سے روس اور امریکہ کے ساتھ ہندوستان کے تعلقات کے بارے میں پوچھا گیا تو کانگریس کے سینئر لیڈر نے کہا ’’ہندوستان کے روس کے ساتھ تعلقات ہیں اور امریکہ کے ساتھ بھی تعلقات ہیں۔ ہندوستان ایک بڑا ملک ہے اور اس کے کئی ممالک کے ساتھ تعلقات ہوں گے۔ یہ ایک معمول کی بات ہے اور ہندوستان کو اپنی مرضی کے مطابق تعلقات رکھنے کا پورا حق ہے۔‘‘

یوکرین کے مسئلہ پر راہل گاندھی نے کہا ’’مجھے لگتا ہے کہ پوری اپوزیشن روس-یوکرین جنگ پر ہندوستان کے موجودہ موقف سے متفق ہوگی۔ میرا نہیں خیال کہ حکومت حال میں جو قراردادیں پیش کر رہی ہوگی اس سے اپوزیشن کا کوئی مختلف نظریہ ہوگا۔‘‘

وہیں، چین کے معاملہ پر راہل گاندھی نے کہا کہ چین ایک خصوصی نقطہ نظر پیش کر رہا ہے۔ چین ون بیلٹ، ون روڈ کا تصور پیش کر رہا ہے کیونککہ وہ عالمی تخلیق کاری کا مرکز بن گیا ہے۔ لیکن ہماری جانب سے کوئی متبادل نقطہ نظر پیش نہیں کیا جا رہا ہے۔

انڈیا اور بھارت تنازع پر راہل گاندھی نے کہا کہ ’’مجھے نہیں معلوم، یہ آپ کو وزیر اعظم سے پوچھنا پڑے گا۔ میں آئین میں اس لفظ سے پوری طرح خوش ہوں۔ حکومت میں خوف کا عالم ہے۔ یہ توجہ ہٹانے کی حکمت عملی ہیں۔ ہم اپنے اتحاد کے لیے ہندوستان کا نام لے کر آئے تھے لیکن اس نے وزیر اعظم کو پریشان کر دیا۔ وزیر اعظم نے خلفشار کی نئی حکمت عملی تیار کی ہے۔‘‘