سپریم کورٹ نے بازار میں تیزی کے دوران سیبی اور سیٹ کو ہوشیار رہنے کی مشورت دی ہے۔

سپریم کورٹ نے بین الاقوامی سیکیورٹیز اینڈ ایکسچینج کمیشن...

مرکزی حکومت کا الرٹ، وزارت صحت نے تمام ریاستوں کے لیے ایڈوائزری جاری کی

 مہاراشٹرا میں زیكا وائرس کے کچھ کیسز سامنے آنے...

بھارت-منگولیا مشترکہ فوجی مشق "نومیڈک ایلیفینٹ” میگھالیہ میں شروع

بھارت اور منگولیا کے مشترکہ فوجی مشق "نومیڈک ایلیفینٹ"...

ہاتھرس حادثے میں جاں بحق افراد کے لیے صدر اور وزیراعظم کی تعزیت

صدر دروپدی مرمو اور وزیراعظم نریندر مودی نے منگل...

راشٹریہ شکشک ایوارڈ کے لیے خود نامزدگی 15 جولائی تک: تعلیم وزارت

راشٹریہ شکشک ایوارڈ 2024 کے لیے اہل اساتذہ سے...

مہنگائی بھتہ روک کر 115 لاکھ سے زائد اہلکاروں کا حق مار رہی ہے حکومت: کانگریس

کانگریس کے ترجمان ابھیشیک منو سنگھوی نے ہفتے کے روز پریس کانفرنس میں کہا کہ گذشتہ برس حکومت نے مرکزی اہلکاروں کو مہنگائی بھتہ روکنے کا عجیب و غریب فیصلہ کیا جس سے ایک کروڑ سے زائد مرکزی اہلکار متاثر ہوئے ہیں۔

نئی دہلی: کانگریس نے کہا ہے کہ حکومت نے مرکزی اہلکاروں کا مہنگائی بھتہ روک کر 115 لاکھ سے زائد اہلکاروں کے ساتھ دھوکہ کرکے کروڑوں شہریوں کے حق کو مارا ہے۔

کانگریس کے ترجمان ابھیشیک منو سنگھوی نے ہفتے کے روز پریس کانفرنس میں کہا کہ گذشتہ برس حکومت نے مرکزی اہلکاروں کو مہنگائی بھتہ روکنے کا عجیب و غریب فیصلہ کیا جس سے ایک کروڑ سے زائد مرکزی اہلکار متاثر ہوئے ہیں۔ ان میں 15 لاکھ فوجی اور 26 لاکھ سے زیادہ فوج سے متعلق ریٹائرڈ پینشن ہولڈر ہیں۔

انہوں نے کہا کہ حکومت کو اہلکاروں کے مفاد کا خیال رکھتے ہوئے انھیں مہنگائی بھتے کی بقایا رقم کی ادائیگی کرنی چاہیے۔ ان کا کہنا تھا کہ مرکزی حکومت کے مہنگائی بھتہ روکنے کے فیصلے سے 115 لاکھ اہلکاروں کے ساتھ ہی ان پر منحصر آٹھ کروڑ سے زیادہ ان کے اہل خانہ بھی متاثر ہوئے ہیں۔

ترجمان نے کہا کہ ملک میں کورونا وبا جب قہر برپا کر رہی تھی اور ملک کا ہر خاندان اس سے متاثر تھا تو مودی حکومت نے دوہرا معیار اختیار کرتے ہوئے سب سے پہلے مرکزی اہلکاروں کے حق پر حملہ کرکے ان کے مہنگائی بھتے کی ادائیگی روکی ہے۔