منی لانڈرنگ کیس میں شہباز شریف اور حمزہ شہباز عدالت میں پیش

شہباز شریف اپنے خلاف 16 ارب روپے کی منی لانڈرنگ کیس کے سلسلے میں ہفتہ کو خصوصی عدالت میں پیش ہوئے

اسلام آباد: پاکستان کے وزیر اعظم شہباز شریف اپنے خلاف 16 ارب روپے کی منی لانڈرنگ کیس کے سلسلے میں ہفتہ کو خصوصی عدالت میں پیش ہوئے۔

عدالت میں سماعت کے دوران شہباز شریف نے کہا کہ جب وہ وزیر اعلیٰ پنجاب تھے تو انہوں نے کوئی تنخواہ یا مراعات لینے سے انکار کیا تھا۔

عدالت میں کیس کی سماعت کے دوران وزیراعظم شہباز شریف کے صاحبزادے اور موجودہ وزیر اعلیٰ پنجاب حمزہ شہباز بھی عدالت میں موجود تھے۔ فیڈرل انویسٹی گیشن ایجنسی (ایف آئی اے) نے اس کیس میں ان کا نام بھی ان کے اہل خانہ سمیت رکھا ہے۔

یہ امر قابل ذکر ہے کہ گزشتہ ہفتے سماعت کے دوران خصوصی عدالت (سنٹرل ون) کے پریزائیڈنگ جج اعجاز حسن اعوان نے کیس میں ان کی عبوری ضمانت میں 28 مئی تک توسیع کی تھی۔ آج جب سماعت دوبارہ شروع ہوئی تو جج نے ایف آئی اے کے وکیل فاروق باجوہ سے کہا کہ شہباز شریف کے بیٹے سلیمان شہباز اور دیگر ملزمان کی گرفتاری سے متعلق ایجنسی کی رپورٹ میں متضاد بیانات ہیں۔ اس بار مسٹر باجوہ نے کہا کہ پتہ موجود ہے، لیکن مشتبہ شخص اس مقام پر نہیں ملا۔

جج نے پھر کہا کہ ایجنسی مسٹر سلیمان اور ایک اور مشتبہ طاہر نقوی کے بارے میں دیگر معمول کی تفصیلات بھی رپورٹ میں بتانے میں ناکام رہی۔

ایف آئی اے کے وکیل نے ایجنسی سے دوبارہ وارنٹ گرفتاری جاری کرنے اور تازہ ترین رپورٹ عدالت میں پیش کرنے کو کہا۔

عدالت نے وزیر اعظم شہباز اور ان کے صاحبزادے حمزہ کی عبوری ضمانت میں 4 جون تک توسیع کردی اور حمزہ کے وکیل کو آئندہ سماعت پر اپنے دلائل پیش کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے سماعت ملتوی کر دی۔

× Join Whatsapp Group